مارنگ شو ہوسٹ مہوش چودھری کا خصوصی انٹرویو

الیکٹرانک میڈیا ہر دور میں اپنا کردار نبھاتا رہا ہے شائد یہی وجہ ہے کہ مارنگ شوز الیکٹرانک میڈیا کا اہم حصہ بن چکے ہیں اور ریٹنگ کے اعتبار سے مارنگ شوز کرنٹ افیئرز شوز پر سبقت لے رہے ہیں۔ الیکٹرانک میڈیا میں مارنگ شوز کا ایک تصور بن چکا ہے جسے کبھی بھی ختم نہیں کیا جاسکتا ۔ اس لیے اردو نیوز ریڈر کی ٹیم نے مارنگ شو کی معروف میزبان مہوش چودھری کا انٹرویو کیا ہے۔ آپ کے اور مہوش چودھری کے درمیان بغیر کسی رکاوٹ کے پیش خدمت ہے مہوش چودھری کا خوبصورت اور یادگار انٹرویو

سوال: اسلام علیکم! کیا حال ہیں مہوش؟
جواب: وعلیکم اسلام! جی الله تعالیٰ کا کرم ہے

سوال: آپ نے اپنے فن کا آغاز کب، کیسے، اور کیوں کیا؟
جواب: میزبانی کا شوق مجھے بچپن سے تھا اس لیے جب مجھے فیلڈ میں کام کرنے موقع ملا تو میں نے اسے ذائع نہیں کیا اور آج آپ کے سامنے ہوں

سوال: آپ کے پسندیدہ میزبان کون ہیں؟
جواب: مجھے اس فیلڈ میں کام کرنے والے تمام لوگ پسند ہیں میں ہر کسی کی قدر کرتی ہوں اور جہاں تک بات ہے پسندیدگی گی تو مجھے فرح حسین، صنم بلوچ اور نور بخاری صاحب کا کام بہت پسند ہے

سوال: آپ کا پسندیدہ رنگ کونسا ہے؟
جواب: مجھے الله تعالیٰ کے بنائے ہوۓ تمام رنگ پسند ہیں کیوں کہ رنگوں سے ہی یہ کائنات حسین ہے مگر سرخ اور گہرا نیلا رنگ زیادہ پسند ہیں

سوال: کھانے میں کیا شوق سے کھاتی ہیں؟
جواب: کھانے میں پاکستانی کھانے شوق سے کھاتی ہوں اور چاول تو میں بہت شوق سے کھاتی ہوں

سوال: کیا آپ گانے سنتی ہیں؟ اگر سنتی ہیں تو پسندیدہ گلوکار کون ہے؟
جواب: جی ہاں میں گانے سنتی ہوں اور میڈم نور جہان میری پسندیدہ گلوکارہ ہیں

سوال: اگر میزبان نہ ہوتیں تو کیا ہوتیں؟
جواب: اگر میزبان نہ ہوتی تو میں وکیل ہوتی کیوں کہ میرے پاپا کا بہت شوق تھا کہ میں وکیل بنوں

سوال: ایسا خواب جو اب تک پورا نہ ہوا ہو؟
جواب: اب تک کوئی ایسا خواب نہیں ہے جو پورا نہ ہوا ہو میں نے جس چیز کی بھی خواہش کی ہے وہ مجھے ملی ہے

سوال: آپ کی پسندیدہ فلم کونسی ہے؟
جواب: میری پسندیدہ فلم کا نام فیشن ہے جو میں شوق سے دیکھتی ہوں اور اسے پسند کرنے کا مقصد یہ ہے کہ دیکھنے والوں کیلئے اس کے اندر ایک پیغام ملتا ہے

سوال: اب تک کتنے چینلز کے ساتھ کام کر چکی ہیں؟
جواب: اب تک چار چینلز کے ساتھ کام کر چکی ہوں جس میں پی ٹی وی، رائل نیوز، اب تک نیوز اور میرا موجودہ چینل روز ٹی وی ہے

سوال: آپ کو بحثیت فی میل کبھی گھر والوں کی طرف سے رکاوٹ کا سامنا کرنا پڑا؟
جواب: جی نہیں مجھے میرے گھر والوں نے شروع سے لے کر اب تک بہت سپورٹ کیا ہے اور میں یہ سمجھتی ہوں کہ اگر وہ نہ ہوتے تو شائد میں یہاں تک نہ پہنچ پاتی

سوال: کیا سمجھتی ہیں میڈیا کس طرف جارہا ہے؟
جواب: میرے خیال میں بہت سے لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ میڈیا نے انکو غلط بریف کیا ہے مگر ایسا کچھ نہیں ہے میڈیا ہمیشہ سے اپنا کردار ایمانداری سے نبھاتا آیا ہے اور نبھاتا رہے گا

سوال: نئے آنے والے جونیئرز کے لیے کوئی پیغام؟
جواب: نئے آنے والے جونیئرز کے لیے میرا یہ پیغام ہے کہ کام کا شوق ہی منزل تک لے کر جاتا ہے اس لیے محنت کریں اور کبھی نا امید نہ ہوں ایک دن آپکو محنت کا پھل ضرور ملے گا

سوال: آخر میں مہوش آپ کا بہت شکریہ کہ آپ نے ہمیں وقت دیا؟
جواب: شکریہ آپ کا جنھوں نے ہمارا انٹرویو کیا اور مجھے خوشی ہوئی کہ آپ ویب بہت اچھا کام کر رہی ہے اور میں امید کرتی ہوں کہ مستقبل میں بھی ایسا ہی کام کرتی رہے گی بہت شکریہ

اپنا تبصرہ بھیجیں